بریکنگ نیوز
latest

468x60

بزنس لیبل والی اشاعتیں دکھا رہا ہے۔ سبھی اشاعتیں دکھائیں
بزنس لیبل والی اشاعتیں دکھا رہا ہے۔ سبھی اشاعتیں دکھائیں

اسٹیٹ بینک نے ڈالر کو لگام ڈالنے کیلئے نئی پابندی لگا دی

 

اسٹیٹ بینک نے ڈالر کو لگام ڈالنے کیلئے نئی پابندی لگا دی

اسٹیٹ بینک آف پاکستان نے ڈالر کی قیمت کوروکنے کیلئے آف شور فارن ایکسچینج ٹریڈنگ ویب سائٹ سے ڈالر ٹریڈنگ پر پابندی لگا دی  ۔ 

ذرائع کے مطابق  اسٹیٹ بینک نے نوٹیفکیشن جاری کیا ہے جس کے مطابق آف شور ڈیجیٹل پلیٹ فارمز کی خدمات لینا ممنوع ہے اور بینکوں کو ہدایات جاری کی گئیں ہیں کہ آف شور ڈیجیٹل پلیٹ فارمزکیلئے خدمات فراہم نہ کریں ساتھ ہی یہ بھی کہا گیا ہے کہ ویب سائٹ ڈالر ٹریڈنگ پر فارن ایکسچینج ایکٹ کے تحت کارروائی ہو گی ۔

دوسری جانب وزیراعظم شہباز شریف نے ڈالر کی قیمت کو لگام ڈالنے کیلئے  لگژری اور غیر ضروری اشیاء کی امپورٹ پر پابندی لگادی، درآمد پر عائد پابندی والی اشیاء میں لگژری گاڑیوں سمیت کاسمیٹکس کے سامان اور دیگر غیر ضروری اشیاء شامل ہیں۔

واضح رہےکہ انٹربینک میں ڈالر ملکی تاریخ کی نئی بلند ترین 199 روپے  کی بلند ترین سطح بھی عبور کرگیا جبکہ اوپن مارکیٹ میں ڈالر 200 روپے کا ہوگیا ہے،نئی حکومت آنے کے بعد امریکی ڈالر 16.57روپے مہنگا ہوچکا ہے ۔

سونے کی قیمت میں اضافہ

 

سونے کی قیمت میں اضافہ

کراچی: عالمی مارکیٹ میں فی اونس سونے کی قیمت 28 ڈالر کے اضافے سے 1956 ڈالر کی سطح پر آنے کے باعث مقامی صرافہ مارکیٹوں میں جمعرات کو فی تولہ اور فی دس گرام سونے کی قیمتوں میں بالترتیب 500 روپے اور 429 روپے کا اضافہ ہوگیا۔

نتیجے میں مختلف شہروں میں فی تولہ سونے کی قیمت بڑھ کر 131500 روپے اور فی دس گرام سونے کی قیمت بڑھ کر 112740 روپے ہوگئی۔

دریں اثنا فی تولہ چاندی کی قیمت بغیر کسی تبدیلی کے 1510 روپے پر مستحکم رہی۔

جعلی دستاویزات پر 29 کروڑ کی 150 گاڑیوں کی درآمدات کا انکشاف

 

جعلی دستاویزات پر 29 کروڑ کی 150 گاڑیوں کی درآمدات کا انکشاف

یہ گاڑیاں کسٹمز اپریزمنٹ ایسٹ اور ویسٹ کلکٹریٹس سے جنوری 2021ء تا دسمبر 2021ء کے دوران کلئیر کرائی گئیں۔ دونوں کلکٹریٹ کی جانب سے اس اقدام پر کسٹمز کلیئرنگ ایجنٹس کے خلاف مقدمہ درج کرلیا گیا ہے جن میں میسرز مسلم انٹرپزائزز، میسر زورلڈ اوشن، میسرز سی کنگ شپنگ ایجنسی، میسرز رفعت رضوان اینڈ کمپنی، میسرز گیلکسی فریٹ فاروڈرنگ، میسرز نورانی ٹریڈرز، میسرز سی اپی اے سی انٹرپرئزز، میسرز یوورجوائس سروسز، میسرز خان برادرز، میسرز ایس اے چوہدری اینڈکو، میسرز بھاگوانی ایسوسی ایٹس، میسرز پرامٹ سروسز سنڈیکیٹ، میسرز زلفی انٹرنیشنل، میسرز یو ایس کارپوریشن، میسرز رباب انٹرپرائزز، میسرز صابری لاجسٹک، میسرز فاسٹرلائن بزنس، میسرز فواد عمید انٹرپرائزز، میسرز امپکس کارگو شامل ہیں۔

ذرائع نے بتایا کہ کسٹمز اپریزمنٹ ایسٹ کلکٹریٹ کی جانب درج دو ایف آئی آر کے مطابق مذکورہ کلیئرنگ ایجنٹس نے جنوری 2021ء تا دسمبر 2021ء کے دوران جعلی دستاویزات پر 29 کروڑ روپے سے زائد مالیت کی 150 گاڑیوں کی کلیئرنس کرانے میں مل اس سے قبل درج کی جانے والی ایف آئی آر میں کلیئرنگ ایجنٹ میسرز یونیک ٹریڈز نے غیرقانونی طریقے سے جع دستاویزات پر 75 گاڑیاں نوید احمد، صورت خان، محمدایاز، یاسر خان، اختر، انور علی، بخت شیر خان، عامر خان، محمد یوسف، عبدالبصیر، حشام گل، محمد الیاس، بخت محمد، نصیب خان، نصراللہ، نیاز علی خان، غازی گل، محمد ندیم، زبیر گل، نورین شاہ، زیب علی، شاہد اختر، زاہد بادشاہ، سہیل بادشاہ، ارشا، صفدرعلی، محمد شیر، محمد نعمان، ثناء اللہ، سعید الرحمن، منصور خان، مطیع الرحمن، انیس الرحمن، مجید اللہ، فرحان، محمد عدیل، علی اکبر، فضل دین خان، زرنوید، ارسلان خان، عباس علی، امان اللہ خان، حضرت علی، خادم علی شاہ، محمد عارف، محمد اسلام، منیب حسین، شاہ فیصل، شاہد علی، وحید احمد، زبیر شاہ، ذاکر اللہ، نجیب اللہ، ذوالفقارعلی، عظمت خان، عمران خان، نعمان، محمد آصف، حضرت حسین، لطیف الرحمن، آصف خان، محمد عابد، ندیم ، ذوالکفال، اقراء اسلم، واحد علی، محمد حسین، عمیر خان، جلال احمد، شفیع اللہ، اعجاز خان، اعجاز خان اور وقار احمد کے نام پر گاڑیوں میں شامل ہنڈ اویزل، ٹویوٹا ایکوا، ٹویوٹا وٹز، 8 میرا،5 ٹویوٹا پاسو، سوزوکی آلٹو، نسان نوٹ، نسان ڈیز، ٹویوٹا پیریس، سوبارو وین،  لینڈ کروزر، ٹویوٹا ٹاکوموپک اپ، نسان جوکی، سوزوکی ویگنار اور ڈائٹسومووو کی کلیئرنس جعلی دستاویزات پر کروائی گئیں۔

ذرائع نے بتایا کہ اپریزمنٹ ویسٹ نے دسمبر 2021ء میں جعلی دستاویزات پر 15 گاڑیوں کی کلیئرنس کا مقدمہ درج کیاگیا ہے۔ درآمد شدہ گاڑیوں کی جعلی دستاویزات پر کسٹم کلئیرنس کا معاملہ سامنے آنے پر کار ڈیلرز اضطراب سے دوچار ہوگئے۔


آل پاکستان موٹر ڈیلرز ایسوسی ایشن کے کوآرڈی نیٹر اعجاز احمد نے کہا ہے کہ کار ڈیلرز اور ٹریڈرز  کسٹمز کلیئرنس دستاویزات کی بنیاد پر کئی دہائیوں سے پورے ملک میں استعمال شدہ گاڑیوں کی خرید و فروخت کرتے ہیں، ہر سال بیرون ملک مقیم پاکستانیوں کی طرف سے درآمد کی جانے والی ہزاروں گاڑیوں میں سے 150 گاڑیوں کی جعلی پی آر سی پر کلیئرنس ہوچکی ہے جنہیں مارکیٹ میں ایک سے زائد بار فروخت بھی کردیا گیا ہے لیکن اس بے قاعدگی میں مذکورہ گاڑیوں کے خریداروں کا کوئی قصور نہیں ہے۔

اعجاز احمد نے کہا کہ وزارت تجارت سے اپیل ہے کہ وہ اس معاملے پر غور کرے تاکہ ان گاڑیوں کے بے گناہ خریداروں کو بچایا جاسکے اور درآمدی پالیسی کی اس خلاف ورزی پر ایک بار چھوٹ دی جائے تاکہ ان خریداروں کے نقصان کو بچایا جاسکے جنہوں نے ان گاڑیوں کو کسٹم دستاویزات کی بنیاد پر خریدا تھا۔

زرمبادلہ کے ذخائر میں 84 کروڑ 37 لاکھ ڈالرز کی کمی

 

زرمبادلہ کے ذخائر میں 84 کروڑ 37 لاکھ ڈالرز کی کمی
اسٹیٹ بینک آف پاکستان کی جانب سے جاری ہونے والی رپورٹ میں 18 مارچ 2022 تک کے اعداد و شمار شامل کیے گئے ہیں، جس میں بتایا گیا ہے کہ زرمبادلہ کے مجموعی ذخائر 84کروڑ37لاکھ ڈالر کی کمی سے 21ارب 43کروڑ97لاکھ ڈالر کی سطح پر پہنچ گئے۔

سرکاری ذخائر کی مالیت 14ارب 96کروڑ24لاکھ ڈالر ریکارڈ کی گئی جبکہ اس دورانیے میں کمرشل بینکوں کے ذخائر میں 2کروڑ55لاکھ ڈالر کا اضافہ ہوا۔  کمرشل بینکوں کے ذخائر 6ارب 47کروڑ73لاکھ ڈالر کی سطح پر آگئے۔

پاکستان اور آئی ایم ایف کے ساتویں اقتصادی جائزہ مذاکرات مزید تاخیر کا شکار

 

پاکستان اور آئی ایم ایف کے ساتویں اقتصادی جائزہ مذاکرات مزید تاخیر کا شکار

اس حوالے سے وزارت خزانہ کا کہنا ہے کہ پاکستان کے آئی ایم ایف کے ساتھ ساتویں اقتصادی جائزہ سے متعلق تکنیکی سطح کے مذاکرات جاری ہیں اور آئی ایم ایف کے ساتھ ڈیٹا شیئرنگ بھی ہورہی ہے، تکنیکی سطح کے مذاکرات کے بعد آئی ایم ایف کے ساتھ ساتویں اقتصادی جائزے کے لیے میمورنڈم آف اکنامک اینڈ فنانشل پالیسی (ایم ای ایف پی) کے متن پر تبادلہ خیال ہوگا، تکنیکی مذاکرات مکمل ہونے کے بعد میمورنڈم آن اکنامک اینڈ فنانشل پالیسیوں کے مسودے کو حتمی شکل دی جائے گی۔

وزارت خزانہ کے اعلامیے میں بتایا گیا ہے کہ حکومت کو یقین ہے کہ آئی ایم ایف کے ساتھ میمورنڈم آف اکنامک اینڈ فنانشل پالیسی (ایم ای ایف پی) کے متن کو حتمی شکل دینے کے بعد اپریل 2022ء کے آخر میں آئی ایم ایف ایگزیکٹو بورڈ کا اجلاس منعقد ہوگا اور حکومت ستمبر میں آئی ایم ایف پروگرام کو کامیابی سے مکمل کرنے کے لیے پرعزم ہے۔

اعلامیے میں مزید بتایا گیا ہے کہ ساتویں جائزے کے تحت مذاکرات منصوبہ بندی کے مطابق جاری ہیں اور دونوں فریقین کے درمیان ورچوئل میٹنگز اور ڈیٹا شیئرنگ کے ذریعے تکنیکی سطح کے مذاکرات جاری ہیں، ساتویں جائزے کے تحت ہونے جاری مذاکرات میں پاکستان اور آئی ایم ایف کے درمیان طے شدہ اہداف کے ساتھ ساتھ حال ہی میں اعلان کردہ وزیراعظم کے امدادی اور صنعتوں کے فروغح کے پیکجز پر فوکس ہے۔

اعلامیے میں بتایا گیا ہے کہ مذاکرات میں پاکستان اور آئی ایم ایف کے درمیان س بات پر اتفاق رائے ہے کہ دسمبر کے آخر تک کے طے شدہ تمام اہداف حاصل کر لیے گئے ہیں، جبکہ چھٹے اقتصادی جائزے کے لیے طے پانے والے میمورنڈم آن اکنامک اینڈ فنانشل پالیسیز (ایم ای ایف پی) میں طے کردہ دیگر اقدامات پر پیش رفت بھی تسلی بخش ہے۔

بتایا گیا ہے کہ فنانسنگ آپریشنز، ریلیف پیک اور صنعتوں کے فروغ کے پیکیج سے متعلق مکمل تفصیلات آئی ایم ایف کے ساتھ شیئر کی گئی ہیں اور اس حوالے سے عمومی طور پر مفاہمت پائی جاتی ہے تاہم آئی ایم ایف نے اگلے چند دنوں میں صنعتی فروغ پیکیج پر مزید بات چیت کی ضرورت کا عندیہ دیا ہے۔

کہا گیا ہے کہ آئی ایم ایف کے ساتھ مذاکرات کے بعد مذکورہ پیکیج پر ایک مفاہمت کی توقع ہے جبکہ وزارت خزانہ ذرائع کا کہنا ہے کہ آئی ایم ایف کے ساتھ اتفاق رائے نہ ہونے کے باعث چھ ارب ڈالر کے قرض پروگرام کی اگلی قسط کے حصول کے لیے مذاکرات مزید تاخیر کا شکار ہوگئے ہیں البتہ آئی ایم ایف سے 96 کروڑ ڈالر کی اگلی قسط کے لیے مذاکرات کا عمل جاری رکھنے پر اتفاق کیا گیا ہے۔

ڈالر کی قدر دو ماہ کی کم ترین سطح پرآگئی

 



انٹربینک مارکیٹ میں گھٹتی ہوئی ڈیمانڈ کے باعث پیر کو ڈالر کی نسبت روپیہ مزید تگڑا ہوا جس سے ڈالر کی قدر دو ماہ کی کم ترین سطح کے ساتھ 176روپے سے بھی نیچے آگئی۔

انٹربینک مارکیٹ میں ڈالر کی قدر اتارچڑھاؤ کے بعد 15پیسے کی کمی سے 175.91روپے پر بند ہوئی جبکہ اوپن کرنسی مارکیٹ میں ڈالر کی قدر بغیر کسی تبدیلی کے 178روپے پرمستحکم رہی۔